22.2 C
Islamabad
منگل, اپریل 13, 2021

دنیا میں سب سے زیادہ خوش عوام اِس ملک کے ہیں

تازہ ترین

ڈسکہ انتخاب کے بعد عوام بھی کہہ رہی ہے کہ گھر جاؤ، حمزہ شہباز

پاکستان مسلم لیگ ن کے نائب صدر میاں حمزہ شہباز شریف کا کہنا ہے کہ موجودہ حکمرانوں کے پاس اقتدار میں رہنے کا اب...

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...
- Advertisement -

یہ کہنے کی ضرورت ہی نہیں ہے کہ پچھلا سال پوری دنیا کے عوام کے لیے بہت مشکل رہا ہے۔ نہ صرف کووِڈ-19 کی وبا 26 لاکھ لوگوں کی موت کا سبب بنی، بلکہ اس کی وجہ سے ہم میں سے بہت سے لوگوں کی زندگی ہی بدل کر رہ گئی ہے۔ پچھلے 12 مہینوں کے بدترین حالات اور اس کے نتیجے میں ذہنی صحت پر پڑنے والے منفی اثرات کے باوجود دنیا میں اب بھی سب سے زیادہ خوش ملک فن لینڈ ہی ہے۔

فن لینڈ نے ‘گیلپ ورلڈ پول’ میں مسلسل چوتھے سال دنیا میں سب سے زیادہ خوش عوام رکھنے والا ملک کا اعزاز حاصل کیا ہے۔ ٹاپ 5 میں فن لینڈ کے بعد آئس لینڈ، ڈنمارک، سوئٹزرلینڈ اور نیدرلینڈز کے نام شامل ہیں۔ نمایاں ممالک میں امریکا کی درجہ بندی میں بہتری آئی ہے جو 18 ویں سے 14 ویں نمبر پر آ گیا ہے جبکہ برطانیہ 13 ویں سے 18 ویں پر آ گیا ہے۔ آسٹریلیا بدستور 12 ویں نمبر پر ہے۔

کولمبیا یونیورسٹی میں سینٹر فار سسٹین ایبل ڈیولپمنٹ کے ڈائریکٹر اور پروفیسر جیفری ساکس کہتے ہیں کہ ہمیں کووِڈ-19 سے بہت کچھ سیکھنے کی ضرورت ہے، یہ ہمیں درپیش عالمی ماحولیاتی خطرات سے آگہی، ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کی فوری ضرورت اور ہر ملک کو عالمی سطح پر تعاون میں درپیش مشکلات کے حوالے سے آگاہ کر رہی ہے۔

واضح رہے کہ اس سال "ورلڈ ہیپی نیس رپورٹ 2021ء” کروناوائرس کی وجہ سے ذرا مختلف طریقے سے بنائی گئی ہے۔ نہ صرف یہ کہ محققین کئی ملکوں میں بالمشافہ انٹرویوز نہیں کر پائے بلکہ انہیں خوشی اور کووِڈ-19 کے درمیان تعلق پر بھی ذرا نئے زاویوں سے دیکھنا پڑا۔ رپورٹ 2012ء سے بنیادی طور پر کُل مقامی پیداوار (GDP)، متوقع عمر، سخاوت و فیاضی، سماجی امداد، آزادی اور بدعنوانی سے حاصل شدہ آمدنی کی سطح کی بنیاد پر مرتب کی جاتی ہے۔

ٹاپ 10 میں جو تبدیلیاں آئی ہیں ان میں گو کہ آئس لینڈ چوتھے سے دوسرے نمبر پر آیا ہے جبکہ ناروے پانچویں سے آٹھویں نمبر پر آیا ہے، لیکن بحیثیتِ مجموعی درجہ بندی پچھلے سال جیسی ہی ہے جو ایک مثبت علامت ہے۔ جرمنی نے نمایاں پیشرفت کی ہے جو گزشتہ سال 17 ویں نمبر سے ترقی پاتے ہوئے اب ساتویں پر آ گیا ہے جبکہ کروشیا، جہاں بالمشافہ انٹرویوز ہوئے، وہ تو 79 ویں سے 23 ویں نمبر پر آ گیا ہے۔

149 ممالک کی فہرست میں افغانستان ایک مرتبہ پھر آخری نمبر پر موجود ہے جبکہ زمبابوے، روانڈا اور بوٹسوانا اس سے پہلے ہیں۔

مزید تحاریر

ڈسکہ انتخاب کے بعد عوام بھی کہہ رہی ہے کہ گھر جاؤ، حمزہ شہباز

پاکستان مسلم لیگ ن کے نائب صدر میاں حمزہ شہباز شریف کا کہنا ہے کہ موجودہ حکمرانوں کے پاس اقتدار میں رہنے کا اب...

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے