23.3 C
Islamabad
منگل, اپریل 13, 2021

آسٹریلیا، 30 لاکھ ڈالرز کے جعلی ڈاک ٹکٹ فروخت کرنے والے دو پاکستانی بھائی پکڑے گئے

تازہ ترین

ڈسکہ انتخاب کے بعد عوام بھی کہہ رہی ہے کہ گھر جاؤ، حمزہ شہباز

پاکستان مسلم لیگ ن کے نائب صدر میاں حمزہ شہباز شریف کا کہنا ہے کہ موجودہ حکمرانوں کے پاس اقتدار میں رہنے کا اب...

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...
- Advertisement -

آسٹریلیا میں دو ایسے پاکستانی بھائیوں کو گرفتار کیا گیا ہے جنہوں نے ‏30 لاکھ ڈالرز یعنی تقریباً ساڑھے 35 کروڑ پاکستانی روپے کے جعلی ڈاک ٹکٹ چھاپ کر فروخت کیے ہیں۔

‏21 سالہ عبید خان اور 22 سالہ شہریار خان کو گرفتاری کے بعد میلبرن کی ایک عدالت میں پیش کیا گیا ہے، جہاں اب انہیں دھوکا دہی کے ایک مقدمے کا سامنا ہے جس میں جعلی ڈاک ٹکٹ رکھنے، فروخت اور تقسیم کرنے کے الزامات شامل ہیں۔

عدالت کو بتایا گیا کہ یہ دونوں بھائی میلبرن کی لاتروب یونیورسٹی میں پڑھتے ہیں اور ان کے گھر پر چھاپے کے دوران جعلی ڈاک ٹکٹوں سے بھرے درجنوں ڈبے برآمد ہوئے جبکہ 30 ہزار ڈالرز مالیت کی قیمتی گھڑیاں اور اصل ڈاک ٹکٹوں کے ایک لاکھ ڈالرز مالیت کے چار پارسل بھی ہاتھ آئے ہیں۔

پولیس کے مطابق یہ معاملہ گزشتہ سال سامنے آیا تھا جب آسٹریلیا پوسٹ نے ebay سمیت مختلف ای-کامرس ویب سائٹس پر ملک کے ایسے ڈاک ٹکٹ فروخت ہوتے دیکھے جو اصل نہیں تھے۔ بھرپور تحقیق کے بعد پتہ چلا کہ یہ ڈاک ٹکٹ میلبرن کے نواحی علاقے برنسوِک کے ایک ڈاک خانے سے بھیجے جا رہے ہیں۔ پولیس نے بدھ کو برنسوِک ایسٹ میں ان بھائیوں کے گھر پر چھاپہ مارا اور جعلی ڈاک ٹکٹوں کے 36 ڈبے اور دیگر سامان برآمد کیا۔

پولیس کے مطابق یہ دونوں اپنے بڑے بھائی کی ہدایات پر کام کر رہے تھے جو بیرونِ ملک مقیم ہے اور تفتیش کے مطابق اس پورے کاروبار کا سرغنہ وہی ہے۔

عدالت نے دونوں بھائیوں کو ضمانت پر رہا تو کر دیا ہے لیکن ان کے پاسپورٹس ضبط کر لیے گئے ہیں، وہ روزانہ تھانے میں رپورٹ کریں گے اور آسٹریلیا چھوڑ کر نہیں جا سکتے۔ عدالت نے خبردار کیا کہ ضمانت توڑنے پر دونوں کو سخت نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا۔

دونوں بھائیوں کو جون میں ایک مرتبہ پھر عدالت میں پیش ہونے کا حکم دیا گیا ہے۔

بتایا جاتا ہے کہ ان دونوں لڑکوں کے والد کراچی میں ٹرانسپورٹ کا بڑا کاروبار چلاتے ہیں اور معاملے کی تحقیقات کرنے والوں کو خطرہ ہے کہ ان کے پاس اتنا پیسہ ہے کہ وہ اپنے پیسے کے بل بوتے پر جعلی پاسپورٹس کا انتظام کر کے ملک سے بھاگ سکتے ہیں۔ پولیس کے مطابق ان کے والد کو بھی اس جعلی کاروبار کا پوری طرح علم تھا۔

مزید تحاریر

ڈسکہ انتخاب کے بعد عوام بھی کہہ رہی ہے کہ گھر جاؤ، حمزہ شہباز

پاکستان مسلم لیگ ن کے نائب صدر میاں حمزہ شہباز شریف کا کہنا ہے کہ موجودہ حکمرانوں کے پاس اقتدار میں رہنے کا اب...

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے