22.2 C
Islamabad
منگل, اپریل 13, 2021

فخر زمان کی اننگز، جو ہمیشہ یاد رکھی جائے گی

تازہ ترین

ڈسکہ انتخاب کے بعد عوام بھی کہہ رہی ہے کہ گھر جاؤ، حمزہ شہباز

پاکستان مسلم لیگ ن کے نائب صدر میاں حمزہ شہباز شریف کا کہنا ہے کہ موجودہ حکمرانوں کے پاس اقتدار میں رہنے کا اب...

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...
- Advertisement -

پاک-جنوبی افریقہ دوسرے ون ڈے میں کھیل گئی فخر زمان کی 193 رنز کی اننگز کو کرکٹ تاریخ کی بہترین باریوں میں شمار کیا جا سکتا ہے اور اگر وہ ڈبل سنچری بنانے میں کامیاب ہو جاتے تو ون ڈے انٹرنیشنل کی تاریخ میں پہلا موقع ہوتا کہ کوئی بیٹسمین دوسری اننگز میں 200 رنز کا ہندسہ عبور کرتا۔

جب پاکستان کی ساتویں وکٹ گری اور جیت کے امکانات معدوم  ہو گئے تو فخر اس وقت 105 گیندوں پر 97 رنز کے ساتھ کریز پر تھے۔ ایک اینڈ مکمل طور پر باؤلرز کے رحم و کرم پر تھا کیونکہ تمام مستند بیٹسمین آؤٹ ہو چکے تھے اور پاکستان کو 11 رنز سے زیادہ کے اوسط سے مزید 137 رنز کی ضرورت تھی۔ میچ تقریباً ختم ہو چکا تھا لیکن پھر جو کچھ ہوا وہ غیر معمولی تھا۔

فخر نے 39 ویں اوور میں چوکا لگا کر اپنی سنچری مکمل کی اور پھر اننگز کو اگلے گیئر میں داخل کر دیا۔ تبریز شمسی کو مسلسل تین گیندوں پر تین چھکے لگائے اور کچھ قسمت نے بھی ساتھ نبھایا۔ کیچ چھوٹے، ریویو کامیاب ہوئے، یہاں تک کہ معاملہ آخری اوور میں 31 رنز تک پہنچ گیا۔

لیکن فخر زمان کی ڈبل سنچری کا امکان کافی تھا، جو 192 رنز تک پہنچ چکے تھے۔ صرف 8 رنز بنا کر وہ ون ڈے کرکٹ کی تاریخ میں دوسری اننگز میں ڈبل سنچری بنانے والے پہلے بلے باز بن جاتے لیکن قسمت کو کچھ اور ہی منظور تھا، وہ رن آؤٹ ہو گئے۔

فخر کے رن آؤٹ نے ایک نیا تنازع بھی کھڑا کیا کیونکہ جب وہ دوسرا رن حاصل کرنے کے لیے دوڑ رہے تھے تو جنوبی افریقہ کے وکٹ کیپر کوئنٹن ڈی کوک نے انہیں آتا دیکھ کر نان اسٹرائیکر کی طرف اشارہ کر کے کچھ کہا، جس پر فخر نے پیچھے مڑ کر دیکھا۔ لیکن قسمت دیکھیں کہ عین اسی موقع پر لانگ آف سے پھینکا گیا تھرو سیدھا ان کے اینڈ پر موجود وکٹوں پر جا لگا۔ یوں لمحے بھر کی غفلت اور جنوبی افریقی فیلڈر کی غیر معمولی نے فخر کی اننگز کا خاتمہ کر دیا۔

سوشل میڈیا پر کئی صارفین بلکہ ماہرین نے بھی ڈی کوک کی حرکت کو معیوب اور اسے کرکٹ قوانین کی خلاف ورزی قرار دیا، جس کے تحت کسی فیلڈر کی جانب سے کھیل کے دوران بیٹسمین کو کسی بھی طریقے سے دھوکا دینے کی کوشش پر 5 رنز ملتے ہیں اور اضافی گیند بھی۔ نہ امپائروں نے اس معاملے پر کوئی ایکشن لیا اور نہ ہی فخر زمان نے کوئی اپیل کی، نتیجہ یہ نکلا کہ فخر کی اننگز 193 رنز پر تمام ہو گئی۔

مزید تحاریر

ڈسکہ انتخاب کے بعد عوام بھی کہہ رہی ہے کہ گھر جاؤ، حمزہ شہباز

پاکستان مسلم لیگ ن کے نائب صدر میاں حمزہ شہباز شریف کا کہنا ہے کہ موجودہ حکمرانوں کے پاس اقتدار میں رہنے کا اب...

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے