22.2 C
Islamabad
منگل, اپریل 13, 2021

ڈیجیٹلائزیشن سے پٹواری نظام کا خاتمہ ممکن ہوگا، فردوس عاشق اعوان

تازہ ترین

ڈسکہ انتخاب کے بعد عوام بھی کہہ رہی ہے کہ گھر جاؤ، حمزہ شہباز

پاکستان مسلم لیگ ن کے نائب صدر میاں حمزہ شہباز شریف کا کہنا ہے کہ موجودہ حکمرانوں کے پاس اقتدار میں رہنے کا اب...

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...
- Advertisement -

معاون خصوصی وزیر اعلیٰ پنجاب فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ وزیراعظم  نے قوم سے نظام بدلنے کا وعدہ کیا تھا، پٹواری نظام کو بدلنے کے لیے ٹیکنالوجی واحد حل تھا، ڈیجیٹلائزیشن نظام سے بدعنوانی کا خاتمہ ممکن ہوگا۔

لاہور میں کمپیوٹرائزڈ لینڈ ریکارڈ سینٹر کے افتتاح کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کرپشن کے خاتمے کے لیے نظام میں تبدیلیاں ضروری ہیں۔ اراضی سینٹر کے قیام سے عوام کو سہولیات میسر ہوں گی۔ ڈیجیٹلائزیشن نظام سے بدعنوانی کا خاتمہ ممکن ہوگا۔ اس وقت 20 موبائل اراضی سینیٹر فیلڈ میں کام کر رہے ہیں۔

اس حوالے سے مسلم لیگ ن پنجاب کی ترجمان عظمیٰ بخاری کا فردوس عاشق کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ شہباز شریف نے 2013 میں لینڈ ریکارڈ کمپوٹرائزیشن پروجیکٹ ورلڈ بینک کے تعاون سے شروع کیا۔ شہباز شریف حکومت نے 6 ارب روپے کی لاگت سے اس پروجیکٹ کو 80 فیصد تک مکمل کیا۔ یہ نالائق تین سال بعد بھی وہیں کھڑے ہیں۔

عظمیٰ بخاری نے کہا کہ خادمہ صاحبہ شہباز شریف دور میں پنجاب کی 145 تحصیلوں میں اراضی ریکارڈ سینٹر پر سروسز کا آغاز کردیا گیا تھا۔ کیوں بار بار شہباز شریف کے منصوبوں پر زبردستی عثمان بزدار کے نام کے فیتے کاٹنے آجاتی ہیں؟ خادمہ جی ہر روز نئے وزیر کے ساتھ ٹی وی پر آکر بزدار حکومت کی کارکردگی بتانے آجاتی ہیں۔

اس سے قبل اپنے ایک بیان میں فردوس عاشق اعوان کا کہنا تھا کہ جہانگیر ترین کے تحفظات ہوسکتے ہیں لیکن وزیراعظم قانون کی عمل داری چاہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جہانگیر ترین بھی رولز آف لا پر یقین رکھتے ہیں۔ وزیراعظم قانون کی عمل داری چاہتے ہیں اور ان کے لیے عوامی مفادات ہی اولین ترجیح ہیں۔ وزیراعظم عمران خان کو کوئی ورغلا نہیں سکتا، وزیراعظم عمران خان اپنے اور وزارت عظمی کے فیصلے خود کرتے ہیں۔

مزید تحاریر

ڈسکہ انتخاب کے بعد عوام بھی کہہ رہی ہے کہ گھر جاؤ، حمزہ شہباز

پاکستان مسلم لیگ ن کے نائب صدر میاں حمزہ شہباز شریف کا کہنا ہے کہ موجودہ حکمرانوں کے پاس اقتدار میں رہنے کا اب...

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے