30 C
Islamabad
پیر, اپریل 12, 2021

بھارت سے ویکسین، پاکستان کے لیے ہتھیار، روسی وزیر خارجہ کا دورۂ جنوبی ایشیا

تازہ ترین

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...

بلاول بھٹو زرداری نے نوٹس پھاڑ کر اچھی حرکت نہیں کی، رانا ثناء اللہ

پاکستان مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ نے کہا ہے کہ یہ بات غلط ہے کہ ن لیگ، پی ڈی ایم...
- Advertisement -

روس وبا کے خلاف جدوجہد اور فوجی و تکنیکی شعبے میں بھارت اور پاکستان کے ساتھ تعاون کرنے کے لیے تیار ہے اور ساتھ ہی مذاکرات کے ذریعے دونوں ممالک کے بہتر ہوتے ہوئے تعلقات کا بھی خیر مقدم کرتا ہے۔ یہ روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف کے حالیہ دورۂ جنوبی ایشیا کے حوالے سے روس کے سب سے بڑے خبر رساں ادارے نے اپنے جائزے میں کہا ہے۔ جس میں چار پہلوؤں ویکسین، دفاعی شعبے میں تعاون، افغانستان میں امن و امان اور پاک-بھارت مذاکرات پر بات کی گئی ہے۔

رپورٹ کہتی ہے کہ روس پہلے ہی بھارت میں اپنی ‘اسپتنک V’ ویکسین بنانے پر اپنی رضامندی ظاہر کر چکا ہے۔

ماسکو سمجھتا ہے کہ پاکستان میں بھی ویکسین کی پیداوار کے امکانات موجود ہیں۔ پاکستان کو اب تک روس کی اس ویکسین کے 50 ہزار ڈوز ملے ہیں اور وزیر خارجہ لاوروف کے مطابق جلد ہی مزید ڈیڑھ لاکھ ویکسین ڈوز مل جائیں گے۔ انہوں نے تسلیم کیا کہ ملک کی ضروریات اس سے کہیں زیادہ ہے لیکن مقامی سطح پر ویکسین بنانے کا انحصار پاکستان کی پیداواری صلاحیت پر ہے۔

پاکستانی وزیر خارجہ محمود قریشی نے زور دیا کہ پاکستان پہلے ہی ‘اسپتنک V’ کے استعمال کی منظوری دے چکا ہے اور لیکن مقامی حکام اس کی مؤثریت پر اعتماد رکھتے ہیں۔ واضح رہے کہ بھارت میں ‘اسپتنک V’ رجسٹریشن میں ابھی چند دن لگیں گے۔

ہتھیاروں کے حوالے سے روس کے وزیر خارجہ نے اپنے بھارتی ہم منصب سبرامنیم جے شنکر کے ساتھ مشترکہ پیداوار کی بات کی اور زور دیا کہ روس ہی واحد ملک ہے جو بھارت کو جدید دفاعی ٹیکنالوجی فراہم کرتا ہے لیکن ساتھ ہی اس شعبے میں بھارت کو اپنے تعلقات متنوّع بنانے کا حق دیتا ہے۔

روس پاکستان میں ہتھیاروں کی پیداوار کے لیے فی الوقت تیار نہیں لیکن اس کی انسدادِ دہشت گردی کی صلاحیت کو بہتر بنانے کے لیے فوجی ساز و سامان فراہم اور مشترکہ جنگی مشقوں میں ضرور حصے لگا مثلاً "دروزبا” (دوستی) اور "عربین مون سون” مشقوں میں۔

مسئلہ افغانستان کے حوالے سے روس سمجھتا ہے کہ وہاں تصفیے کے لیے بہترین طریقہ ‘ماسکو فارمیٹ’ ہے جس میں محض افغانستان کے پڑوسی ممالک ہی شامل نہیں۔ ماسکو افغان مذاکرات کو تیز تر کرنے کے لیے کانفرنس کے انعقاد کو بھی تیار ہے، جو لاوروف کے بقول اس وقت سنجیدہ مسائل سے دوچار ہیں اور حال ہی میں مذاکرات کا سلسلہ ٹوٹ بھی گیا تھا۔

ماسکو توقع رکھتا ہے کہ امریکا اور طالبان کے مابین ہونے والے مذاکرات کا احترام کیا جائے گا، لیکن وہ پاکستان کی طرح شمالی و مشرقی افغانستان میں دہشت گرد گروپوں کی بڑھتی ہوئی سرگرمیوں پر تشویش میں مبتلا ہے۔

رپورٹ کہتی ہے ماسکو پاک-بھارت دو طرفہ تعلقات کو بہتر بنانے کے لیے اٹھائے گئے حالیہ اقدامات کا خیر مقدم کرتا ہے اور روسی وزیر خارجہ نے کہا کہ ساتھ ساتھ روس یہ بھی امید کرتا ہے کہ نئی دہلی بیجنگ کے ساتھ اپنے سرحدی تنازعات کو حل کرنے کا راستہ بھی ڈھونڈے گا۔ مجموعی طور پر ماسکو جنوبی ایشیا میں تنازعات کے پُر امن حل کے لیے "ہر ممکن سہولت” دینے کے لیے تیار ہے۔

روسی وزیر خارجہ نے زور دیا کہ ایشیا میں امریکی پابندیوں کے حوالے سے روس واشنگٹن کی "جغرافیائی و سیاسی تقسیم” کے بجائے آسیان جیسے "کھلے ڈھانچے” کی حمایت کرتا ہے۔

مزید تحاریر

سندھ حکومت نے سعید غنی سے تعلیم کا قلمدان واپس لینے کا فیصلہ کرلیا

سندھ کی صوبائی حکومت میں وزیر تعلیم و لیبر سعید غنی سے محکمہ تعلیم کا قلمدان لینے کا فیصلہ کرلیا گیا، ساتھ ہی کابینہ...

ن لیگ کو چاہیے کہ پیپلز پارٹی جیسی سیاست کرے، فواد چودھری

وفاقی وزیر برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی فواد چودھری نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن احتجاجی سیاست سے باہر آکر پیپلز پارٹی جیسی سیاست...

پیپلز پارٹی کو نوٹس مسلم لیگ ن نے نہیں، پی ڈی ایم نے بھیجا تھا، مریم نواز

پاکستان مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہے کہ جس کے لیے کہا جاتا تھا کہ سیاست ختم ہوگئی اس...

بلاول بھٹو زرداری نے نوٹس پھاڑ کر اچھی حرکت نہیں کی، رانا ثناء اللہ

پاکستان مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ نے کہا ہے کہ یہ بات غلط ہے کہ ن لیگ، پی ڈی ایم...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے