27.7 C
Islamabad
بدھ, مئی 19, 2021

کرونا انتخابات، مغربی بنگال میں مودی کو شکست

تازہ ترین

تین سال بعد ژوب کے لیے پروازوں کا آغاز

تقریباً تین سال بعد پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز نے کراچی اور ژوب کے درمیان پروازوں کا آغاز کر دیا ہے۔ اس سلسلے کی پہلی پرواز...

کرونا وائرس کے بعد سمندری طوفان بھی بھارت پہنچ گیا، 24 ہلاک، 100 لاپتہ

بحیرۂ عرب میں سمندری طوفان سے بھارت کے مغربی ساحل پر کم از کم 24 افراد ہلاک اور 100 لاپتہ ہو چکے ہیں۔ ایک ایسے...

مقبوضہ کشمیر، کرونا ویکسین کے حوالے سے بھی امتیازی سلوک کا شکار

‏82 سالہ امینہ بانو بڈگام کے ایک سرکاری ہسپتال کے ویکسینیشن روم میں موجود ہیں تاکہ کووِڈ-19 کی ویکسین کا پہلا ٹیکا لگوا سکیں...

گوانتانامو کے معمر ترین پاکستانی قیدی کی رہائی کا امکان روشن ہو گیا

پاکستان سے تعلق رکھنے والے 73 سالہ سیف اللہ پراچہ بدنامِ زمانہ گوانتانامو قید خانے کے سب سے عمر رسیدہ قیدی ہیں۔ بالآخر 16...
- Advertisement -

بھارت کی ریاست مغربی بنگال میں ریاستی انتخابات میں موجودہ وزیر اعلیٰ ممتا بینرجی کی جماعت نے وزیر اعظم نریندر مودی کی پارٹی کو شکست دے دی ہے۔

یہ انتخابات ایک ایسے موقع پر منعقد ہوئے کہ جب ملک میں کووِڈ-19 کی وبا بے قابو ہو چکی ہے اور اس وقت ملک کو صحت کے بدترین بحران کا سامنا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ نریندر مودی کو وبا کے بجائے انتخابات کو اہمیت دینے پر سخت تنقید کا سامنا تھا۔ چند ماہرین نے ریاستی انتخابات کے لیے جلوسوں کی اجازت دینے کے فیصلے پر بلکہ ایسے نازک موقع پر ووٹنگ پر ہی اعتراض اٹھایا کیونکہ اس دوران سماجی فاصلے اور چہرے پر ماسک پہننے کی بنیادی احتیاطی تدابیر کی سنگین خلاف ورزیاں ہوئیں۔

بہرحال، اب 66 سالہ ممتا بینرجی تیسری بار مغربی بنگال کی وزیر اعلیٰ بننے کو تیار ہیں۔ الیکشن کمیشن کے اعلان کے مطابق اُن کی جماعت ترینامول کانگریس پارٹی نے 294 میں سے 200 سے زیادہ نشستیں حاصل کر کے ایوان میں دو تہائی اکثریت حاصل کر لی ہے۔ چند نشستوں پر حتمی گنتی ابھی باقی ہے۔

ممتا بینرجی اس وقت بھارت کی واحد خاتون وزیر اعلیٰ ہیں۔ اپنی فاتحانہ تقریر میں انہوں نے کہا کہ ریاست میں پہلا چیلنج کووِڈ-19 سے نمٹنا ہے اور ہمیں یقین ہے کہ ہم اس میں کامیابی حاصل کریں گے۔

مغربی بنگال میں شکست کے باوجود مودی کی بھارتیہ جنتا پارٹی نے مغربی بنگال میں اپنے قدم مضبوط کیے ہیں اور اب حزبِ اختلاف کی اہم جماعت بن گئی ہیں۔ 2016ء میں صرف تین کے مقابلے میں انہوں نے اس مرتبہ تقریباً 80 نشستیں حاصل کی ہیں۔

نریندر مودی، ان کے ساتھیوں اور علاقائی سیاست دانوں نے وبا کے باوجود پانچ ریاستوں میں ہونے والے انتخابات کے لیے زبردست مہم چلائی۔ اس کی بدولت بی جے پی ریاست آسام میں اقتدار بچانے میں کامیاب ہو گئی البتہ تامل ناڈو میں حزب اختلاف کی اہم جماعت نے کامیابی حاصل کی۔ کیرلا میں برسرِ اقتدار لیفٹ ڈیموکریٹک فرنٹ حکومت بنانے کے لیے تیار ہے اور بی جے پی کے اتحاد کو یہاں سے ایک نشست بھی نہیں ملی۔

ریاستی انتخابات میں زیادہ تر ووٹنگ مارچ میں ہوئی تھی لیکن چند علاقوں میں پولنگ اپریل تک جاری رہی، یعنی اس مہینے میں جس میں بھارت میں مریضوں کی تعداد روز بروز بڑھتی ہی چلی گئی۔ اتوار بھارت کے لیے سب سے بھیانک دن تھا جس میں اعلان کیا گیا کہ گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران 3,689 اموات ظاہر کی گئیں۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ایک دن میں 3,92,488 نئے مریضوں کی آمد کے ساتھ اب کُل کیسز 1.96 کروڑ ہو چکے ہیں۔

مزید تحاریر

تین سال بعد ژوب کے لیے پروازوں کا آغاز

تقریباً تین سال بعد پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز نے کراچی اور ژوب کے درمیان پروازوں کا آغاز کر دیا ہے۔ اس سلسلے کی پہلی پرواز...

کرونا وائرس کے بعد سمندری طوفان بھی بھارت پہنچ گیا، 24 ہلاک، 100 لاپتہ

بحیرۂ عرب میں سمندری طوفان سے بھارت کے مغربی ساحل پر کم از کم 24 افراد ہلاک اور 100 لاپتہ ہو چکے ہیں۔ ایک ایسے...

مقبوضہ کشمیر، کرونا ویکسین کے حوالے سے بھی امتیازی سلوک کا شکار

‏82 سالہ امینہ بانو بڈگام کے ایک سرکاری ہسپتال کے ویکسینیشن روم میں موجود ہیں تاکہ کووِڈ-19 کی ویکسین کا پہلا ٹیکا لگوا سکیں...

گوانتانامو کے معمر ترین پاکستانی قیدی کی رہائی کا امکان روشن ہو گیا

پاکستان سے تعلق رکھنے والے 73 سالہ سیف اللہ پراچہ بدنامِ زمانہ گوانتانامو قید خانے کے سب سے عمر رسیدہ قیدی ہیں۔ بالآخر 16...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے