36 C
Islamabad
جمعہ, جون 18, 2021

اکنامک سروے میں غربت اور بے روزگاری کا ذکر تک نہیں، بلاول بھٹو زرداری

تازہ ترین

پی ٹی آئی دور میں گھوڑوں کے بجائے گدھوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے، بلاول بھٹو

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ خبردار! اگر کسی نے نالائق حکومت کے لیے ریاست مدینہ کا لفظ...

اسلام آباد میں خواتین کے لیے الگ بازار بنانے جا رہے ہیں، شیخ رشید

وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ منشیات اور آئس کے ڈیلرز کو فور طور پر ختم کیا جائے، اسلام آباد...

پیٹرول کے بعد سی این جی کی قیمتوں میں بھی فی کلو 9 روپے اضافے کا امکان

آئندہ ماہ کمپریسڈ نیچرل گیس (سی این جی) کی قیمتوں میں 9 روپے فی کلو تک اضافے کا امکان، سی این جی کی موجودہ...

پی ٹی آئی حکومت کی کامیابی کا پیمانہ کیا ہو؟ – جمال عبداللہ عثمان

پیمانہ کیا ہو کہ پاکستان تحریک انصاف نے سابق تمام حکومتوں سے بہت اچھا پرفارم کیا ہے۔ یا پھر پیمانہ کیا ہو، جس سے پتا...
- Advertisement -

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ موجودہ حکومت کے اکنامک سروے میں غربت اور بے روزگاری کا اس لیے ذکر نہیں کیا گیا کہ ان دونوں میں 3 سالہ دور میں ریکارڈ اضافہ ہوا ہے۔

بلاول ہاؤس کے میڈیا سیل کی جانب سے جاری کردہ بیان کے مطابق انہوں نے موجودہ حکومت کے اکنامک سروے 2021 کو تنقید کا نشانہ بنایا۔ انہوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا میں غربت کی شرح میں تاریخی اضافہ ہوا ہے، اس وجہ سے اکنامک سروے میں غربت کا ذکر تک نہیں۔ ملکی تاریخ میں بے روزگاری کی شرح میں ریکارڈ اضافہ وزیراعظم عمران خان کی تبدیلی کا اصل چہرہ واضح کرتا ہے۔

بلاول بھٹو نے کہا کہ غربت اور بے روزگاری کے اعدادوشمار کو چھپانا اور مہنگائی کے لیے بہانے بنانا کسی مسئلے کا حل نہیں ہے۔ جب عوامی مسائل درست طریقے سے اکنامک سروے میں بھی سامنے نہیں لائی جائیں گے تو یہ مسائل حل کیسے ہوں گے؟ عوام پی ٹی آئی، آئی ایم ایف بجٹ کے بوجھ کو اٹھاتے ہوئے مہنگائی، بے روزگاری اور غربت کی صورت میں وزیراعظم عمران خان کی نااہلی کی مہنگی قیمت کو بھگت رہے ہیں۔

واضح رہے کہ مالی سال 22-2021 کا مالی بجٹ آج بروز جمعہ وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین کی جانب سے پیش کیا جائے گا۔ آئندہ مالی سال کے بجٹ کا کل حجم 8000 ارب روپے کے لگ بھگ ہوگا جبکہ معیشت کا حجم 52 ہزار 57 ارب تک پہنچے گا۔

اس سے قبل اپنے ایک بیان میں چیئرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا کہ اگر حکومت نے کلبھوشن کو این آر او دینا تھا تو آرڈیننس کیوں لایا گیا؟ ایک وقت تھا آپ کشمیر کے وکیل بنتے تھے لیکن کلبھوشن کے وکیل نکلے۔ اگر حکومتی ارکان ہمیں اسمبلی میں سنیں گے نہیں یا بولنے نہیں دیں گے تو یہ زیادتی ہوگی۔ بیرون ملک پاکستانیوں کو ووٹ کا حق پیپلز پارٹی بھی دینا چاہتی ہے لیکن اس کے لیے حکومت کو ہمیں ساتھ لے کر چلنا ہوگا۔ زبردستی کوئی بھی بل پاس نہیں ہوسکتا۔ اگر آپ ہم سے بات کریں گے تو ہم آپ کی معاونت کریں گے۔

مزید تحاریر

پی ٹی آئی دور میں گھوڑوں کے بجائے گدھوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے، بلاول بھٹو

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کا کہنا ہے کہ خبردار! اگر کسی نے نالائق حکومت کے لیے ریاست مدینہ کا لفظ...

اسلام آباد میں خواتین کے لیے الگ بازار بنانے جا رہے ہیں، شیخ رشید

وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ منشیات اور آئس کے ڈیلرز کو فور طور پر ختم کیا جائے، اسلام آباد...

پیٹرول کے بعد سی این جی کی قیمتوں میں بھی فی کلو 9 روپے اضافے کا امکان

آئندہ ماہ کمپریسڈ نیچرل گیس (سی این جی) کی قیمتوں میں 9 روپے فی کلو تک اضافے کا امکان، سی این جی کی موجودہ...

پی ٹی آئی حکومت کی کامیابی کا پیمانہ کیا ہو؟ – جمال عبداللہ عثمان

پیمانہ کیا ہو کہ پاکستان تحریک انصاف نے سابق تمام حکومتوں سے بہت اچھا پرفارم کیا ہے۔ یا پھر پیمانہ کیا ہو، جس سے پتا...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے