28.2 C
Islamabad
پیر, اگست 2, 2021

ڈپٹی اسپیکر کے بعد اسپیکر قومی اسمبلی کے خلاف بھی اپوزیشن کی تحریک عدم اعتماد آگئی!

تازہ ترین

مقبوضہ کشمیر کے تاجر، پاک-بھارت تجارت شروع ہونے کے منتظر

صرف دو سال پہلے عامر عطا اللہ کہتے تھے کہ پاکستانی سرحد کے قریب واقع قصبہ اُڑی میں تاجر کی حیثیت سے ان کا...

گزشتہ 75 سالوں میں آبدوزوں کے صرف 2 شکار، ایک پاکستانی آبدوز نے کیا

دوسری جنگِ عظیم کے دوران دشمن کے بحری جہازوں کو تباہ کرنے میں آبدوزوں نے بہت اہم کردار ادا کیا تھا۔ نازی جرمنی کی...

گھانا کی نئی قومی مسجد ایک اہم سیاحتی مقام بن گئی

مغربی افریقہ کے ملک گھانا کی نئی قومی مسجد ایک مقبول سیاحتی مقام بن گئی ہے اور نہ صرف مسلمان بلکہ غیر مسلم بھی...

تیل کا اخراج، تاریخ کے سب سے بڑے حادثات

اِس وقت کراچی کے ساحل پر ایک بحری جہاز 'ایم وی ہینگ ٹونگ 77' پھنسا ہوا ہے۔ گو کہ یہ ایک کنٹینر شپ ہے...
- Advertisement -

ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی قاسم سوری کے بعد اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کے خلاف حزب اختلاف کی جماعتوں پاکستان مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی کی جانب سے تحریک عدم اعتماد کا اعلان، دونوں جماعتیں ایک پیج پر آگئیں۔

مسلم لیگ ن اور پیپلز پارٹی نے متفقہ طور پر اسپیکر اسد قیصر کے خلاف عدم اعتماد لانے کی تجویز دے دی ہے۔ اس حوالے سے صدر مسلم لیگ ن اور چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زردای پارٹی رہنماؤں سے تجاویز بھی طلب کریں گے۔ شہباز شریف اور بلاول بھٹو زرداری نے متفقہ طور پر فیصلہ کیا ہے کہ اپنی قیادت سے مشورہ کرنے کے بعد اسپیکر اسمبلی کے خلاف تحریک عدم اعتماد لائی جائے گی۔

اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کے خلاف عدم اعتماد لانے کے لیے حزب اختلاف، حکومت میں موجود ناراض اراکین سے بھی مشورہ کرے گی۔ واضح رہے کہ حزب اختلاف اس سے قبل ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی قاسم خان سوری کے خلاف تحریک عدم اعتماد جمع کراچکی ہے۔

گزشتہ روز قومی اسمبلی کے اجلاس میں ہونے والے واقعے سے متعلق آج اسپیکر قومی اسمبلی نے بلاول بھٹو زرداری اور شہباز شریف سے ٹیلیفونک رابطہ کیا جس میں دونوں رہنماؤں کو نامناسب رویہ اختیار کرنے والے اراکین کے خلاف کاروائی کرنے کے حوالے سے یقین دلایا گیا۔ اسد قیصر نے شہباز شریف اور بلاول بھٹو زرداری سے پارلیمان کی صورتحال پر بھی تبادلہ خیال کیا۔

دوسری طرف وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے آج شہباز شریف سے ملاقات بھی کی اور صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔ ملاقات کے بعد شہباز شریف نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے قومی اسمبلی میں حکومتی اراکین کے رویے کو پارلیمان کی تاریخ میں سیاہ دن قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ بلاول بھٹو زرداری کی یہاں اظہار یکجہتی کے لیے موجودگی پر ان کا شکر گزار ہوں۔

بلاول بھٹو کا اس موقع پر کہنا تھا کہ ایوان زیریں میں حکومتی اراکین نے حزب اختلاف کے رہنما کے ساتھ جو رویہ اختیار کیا اس کے بعد ان کی معاشرے میں کیا عزت رہ گئی؟ شہباز شریف قائد حزب اختلاف ہیں اور اپوزیشن کی نمائندگی کرتے ہیں لیکن جو کچھ حکومتی اراکین نے کیا وہ انہیں زیب دیتا ہے۔

مزید تحاریر

مقبوضہ کشمیر کے تاجر، پاک-بھارت تجارت شروع ہونے کے منتظر

صرف دو سال پہلے عامر عطا اللہ کہتے تھے کہ پاکستانی سرحد کے قریب واقع قصبہ اُڑی میں تاجر کی حیثیت سے ان کا...

گزشتہ 75 سالوں میں آبدوزوں کے صرف 2 شکار، ایک پاکستانی آبدوز نے کیا

دوسری جنگِ عظیم کے دوران دشمن کے بحری جہازوں کو تباہ کرنے میں آبدوزوں نے بہت اہم کردار ادا کیا تھا۔ نازی جرمنی کی...

گھانا کی نئی قومی مسجد ایک اہم سیاحتی مقام بن گئی

مغربی افریقہ کے ملک گھانا کی نئی قومی مسجد ایک مقبول سیاحتی مقام بن گئی ہے اور نہ صرف مسلمان بلکہ غیر مسلم بھی...

تیل کا اخراج، تاریخ کے سب سے بڑے حادثات

اِس وقت کراچی کے ساحل پر ایک بحری جہاز 'ایم وی ہینگ ٹونگ 77' پھنسا ہوا ہے۔ گو کہ یہ ایک کنٹینر شپ ہے...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے