21.6 C
Islamabad
ہفتہ, دسمبر 4, 2021

چارپائی نیوزی لینڈ میں، قیمت 94 ہزار روپے

تازہ ترین

ورلڈکپ کون جیتے گا؟ – احمدحماد

کرکٹ کانواں ورلڈ کپ ٹورنامنٹ ۲۰۰۷ء کے موسم بہار میں ویسٹ انڈیز میں کھیلا گیا۔ یہ ورلڈ کپ ون ڈے انٹرنیشنل میچوں پہ مشتمل...

بُزدار کا لاہور – احمدحماد

لاہورہزاروں سال پرانا شہر ہے۔یہاں کے باسی اس سے بہت پیار کرتے ہیں۔جس طرح عربی زبان بولنے والے دیگر زبانیں بولنے والوں کو گونگا...

مزاحمت لیکس – احمدحماد

بارہ اکتوبر ۱۹۹۹؁ء کے فوجی انقلاب کی دو کہانیاں ہیں۔ اور دونوں ہی عوام نے سن رکھی ہیں۔ ایک کہانی وہ ہے جو ہم...

شہبازشریف کے خلاف لندن میں کوئی مقدمہ نہیں بنایا گیا، شہزاد اکبر

مشیر داخلہ واحتساب شہزاد اکبر نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن غلط بیانی کررہی ہے۔ شہبازشریف کے خلاف لندن میں کوئی مقدمہ بنایا گیا...
- Advertisement -

نیوزی لینڈ کی ایک کمپنی روایتی چارپائی کو 94 ہزار روپے میں فروخت کر رہی ہے، صرف اس کا نام Vintage Indian DayBed رکھ کر۔

اینابیل نامی برانڈ اس چارپائی کو اپنی نوعیت کی منفرد اور "اصل” چارپائی قرار دے رہا ہے اور قیمت 800 نیوزی لینڈ ڈالرز مقرر کی ہے جو پاکستانی روپوں میں 94 ہزار روپے سے زیادہ بنتے ہیں۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ یہ قیمت بھی "سیل” پر دی جا رہی ہے۔ اس ویب سائٹ پر اس چارپائی کی "اصل قیمت” 1200 ڈالرز تھی یعنی تقریباً ایک لاکھ 42 ہزار روپے تھی۔

اس برانڈ نے یہ چارپائی غالباً بھارت سے حاصل کی ہے کیونکہ اس کے FAQs یعنی عام سوالات والے حصے میں لکھا ہے کہ کس طرح اس کی مصنوعات بھارت، چین اور انڈونیشیا کے دوروں میں ہاتھوں سے بنوائی گئی ہیں۔

چارپائی برصغیر پاک و ہند میں ایک عام گھریلو فرنیچر ہے اور تقریباً ہر گھر میں ہی اسے استعمال کیا جاتا ہے۔

یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ کسی بین الاقوامی برانڈ نے اس خطے کی عام مصنوعات کو بھاری قیمتوں پر فروخت کیا ہے۔ پاکستان کی پشاور چپلوں سے لے کر بھارت کے عام گھریلو تھیلوں تک، بہت کچھ ہزاروں بلکہ لاکھوں روپوں کی قیمت کے ساتھ بیچا گیا ہے۔ نیوزی لینڈ ہی کے قریبی ملک آسٹریلیا میں ایسی ہی چارپائی 990 آسٹریلین ڈالرز یعنی ایک لاکھ 22 ہزار روپے میں فروخت کی گئی ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ اس کے ساتھ لکھا تھا "100 فیصد آسٹریلیا میں بنی ہوئی۔”

مزید تحاریر

ورلڈکپ کون جیتے گا؟ – احمدحماد

کرکٹ کانواں ورلڈ کپ ٹورنامنٹ ۲۰۰۷ء کے موسم بہار میں ویسٹ انڈیز میں کھیلا گیا۔ یہ ورلڈ کپ ون ڈے انٹرنیشنل میچوں پہ مشتمل...

بُزدار کا لاہور – احمدحماد

لاہورہزاروں سال پرانا شہر ہے۔یہاں کے باسی اس سے بہت پیار کرتے ہیں۔جس طرح عربی زبان بولنے والے دیگر زبانیں بولنے والوں کو گونگا...

مزاحمت لیکس – احمدحماد

بارہ اکتوبر ۱۹۹۹؁ء کے فوجی انقلاب کی دو کہانیاں ہیں۔ اور دونوں ہی عوام نے سن رکھی ہیں۔ ایک کہانی وہ ہے جو ہم...

شہبازشریف کے خلاف لندن میں کوئی مقدمہ نہیں بنایا گیا، شہزاد اکبر

مشیر داخلہ واحتساب شہزاد اکبر نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن غلط بیانی کررہی ہے۔ شہبازشریف کے خلاف لندن میں کوئی مقدمہ بنایا گیا...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے