19.9 C
Islamabad
ہفتہ, دسمبر 4, 2021

ورلڈ کپ سے پہلے مصباح اور وقار دونوں نے استعفیٰ دے دیا

تازہ ترین

ورلڈکپ کون جیتے گا؟ – احمدحماد

کرکٹ کانواں ورلڈ کپ ٹورنامنٹ ۲۰۰۷ء کے موسم بہار میں ویسٹ انڈیز میں کھیلا گیا۔ یہ ورلڈ کپ ون ڈے انٹرنیشنل میچوں پہ مشتمل...

بُزدار کا لاہور – احمدحماد

لاہورہزاروں سال پرانا شہر ہے۔یہاں کے باسی اس سے بہت پیار کرتے ہیں۔جس طرح عربی زبان بولنے والے دیگر زبانیں بولنے والوں کو گونگا...

مزاحمت لیکس – احمدحماد

بارہ اکتوبر ۱۹۹۹؁ء کے فوجی انقلاب کی دو کہانیاں ہیں۔ اور دونوں ہی عوام نے سن رکھی ہیں۔ ایک کہانی وہ ہے جو ہم...

شہبازشریف کے خلاف لندن میں کوئی مقدمہ نہیں بنایا گیا، شہزاد اکبر

مشیر داخلہ واحتساب شہزاد اکبر نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن غلط بیانی کررہی ہے۔ شہبازشریف کے خلاف لندن میں کوئی مقدمہ بنایا گیا...
- Advertisement -

پاکستان نے پیر کو آئندہ اہم سیریز اور ساتھ ہی ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے لیے اپنے اسکواڈ کا اعلان تو کیا لیکن ساتھ ہی ہیڈ کوچ مصباح الحق اور باؤلنگ کوچ وقار یونس کے استعفے کی خبر بھی آ گئی۔ مصباح نے اپنے اہلِ خانہ سے دُوری کو وجہ قرار دیا جبکہ وقار یونس کا کہنا تھا کہ انہوں نے مصباح کے ساتھ ہی ذمہ داری سنبھالی تھی، اس لیے بہتر یہی ہے کہ وہ بھی ان کے ساتھ استعفیٰ دے دیں۔

رواں ماہ نیوزی لینڈ کے تاریخی دورۂ پاکستان کو دیکھتے ہوئے پاکستان کرکٹ بورڈ نے عبوری طور پر ثقلین مشتاق اور عبد الرزاق کو کوچنگ کی ذمہ داریاں سونپ دی ہیں۔

یہ اعلان ایک ایسے وقت میں کیا گیا ہے جب پاکستان نے نیوزی لینڈ اور انگلینڈ کے خلاف ہوم سیریز کے ساتھ ساتھ ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے لیے بھی اپنی ٹیم کا اعلان کیا ہے اور اس کی وجہ رمیز راجا کی ممکنہ طور پر بطور چیئرمین کرکٹ بورڈ میں آمد کو قرار دیا جا رہا ہے۔ رمیز راجا کو وزیر اعظم عمران خان نے نامزد کیا ہے اور ممکنہ طور پر 13 ستمبر کو وہ یہ عہدہ سنبھالیں گے لیکن ابھی سے بورڈ کے امور میں ان کی مداخلت نظر آ رہی ہے۔

استعفوں کا سیزن: مصباح نے بھی ایک عہدہ چھوڑ دیا

مصباح کو دو سال پہلے ستمبر 2019ء میں ہیڈ کوچ کے عہدے پر فائز کیا گیا تھا اور اس وقت بھی اس معاملے پر کافی تنازع کھڑا ہوا تھا۔ اب جبکہ ان کے معاہدے میں ایک سال باقی تھا، یوں ورلڈ کپ سے پہلے ٹیم کو چھوڑ دینا بھی نئی بحث کو جنم دے گا۔

چیف ایگزیکٹو پاکستان کرکٹ بورڈ وسیم خان کہتے ہیں کہ بورڈ مصباح الحق اور وقار یونس کے فیصلے کا احترام کرتا ہے۔ وبا کے اِس دور میں کرکٹ آسان نہیں ہے اور انہوں نے غالباً اگلے چھ ماہ کی کرکٹ مصروفیات دیکھتے ہوئے یہ فیصلہ کیا ہے۔

قبل ازیں، پاکستان نے نیوزی لینڈ اور انگلینڈ کے خلاف سیریز اور ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے لیے ٹیم کا اعلان کیا تھا جس میں کئی حیران کن فیصلے شامل ہیں۔ مثلاً آصف علی اور خوشدل شاہ ٹیم میں موجود ہیں جبکہ فہیم اشرف اور شرجیل خان کو باہر کر دیا گیا ہے۔

پاکستان کو 25 ستمبر سے نیوزی لینڈ کے خلاف پانچ میچز کی سیریز کھیلنی ہے، جس کے بعد راولپنڈی میں 13 اور 14 اکتوبر کو انگلینڈ کے خلاف دو میچز ہوں گے۔ پھر ٹیم ورلڈ کپ کے لیے متحدہ عرب امارات روانہ ہوگی جہاں 24 اکتوبر کو پاک-بھارت مقابلہ بھی ہوگا۔

ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ بھارت میں نہیں ہوگا، با ضابطہ اعلان ہو گیا

جس ٹیم کا اعلان کیا گیا ہے اس میں آصف علی اور خوشدل شاہ کی شمولیت پر سب سے زیادہ انگلیاں اٹھیں گی، کیونکہ دونوں کو کئی مواقع مل چکے ہیں اور وہ ابھی تک خود کو منوا نہیں پائے۔ آصف علی کا اوسط 29 میچز میں صرف 16 ہے اور وہ اس وقت کچھ خاص فارم میں بھی نہیں ہیں۔ خوشدل نے 9 میچز کھیلے ہیں اور صرف 130 رنز بنا پائے ہیں۔ پھر اعظم خان کو بھی ٹیم میں شامل کیا گیا ہے، جن کی اپنی صلاحیتوں پر ابھی تک سوالیہ نشان موجود ہے لیکن ان کی موجودگی سے سابق کپتان سرفراز احمد کا پتہ صاف ہو چکا ہے۔ محمد رضوان اب وکٹ کیپنگ میں پاکستان کا پہلا انتخاب ہیں اور اعظم خان ان کا بیک اپ ہوں گے۔

ٹیم کے کپتان بابر اعظم ہوں گے اور شاداب خان نائب کی ذمہ داریاں نبھائیں گے جبکہ دیگر کھلاڑیوں میں اعظم خان، آصف علی، حارث رؤف، حسن علی، خوشدل شاہ، شاہین آفریدی، صہیب مقصود، عماد وسیم، محمد حسنین، محمد حفیظ، محمد رضوان، محمد نواز اور محمد وسیم جونیئر شامل ہیں۔ عثمان قادر، شاہنواز ڈاہانی اور فخر زمان کو ریزرو میں رکھا گیا ہے۔

مزید تحاریر

ورلڈکپ کون جیتے گا؟ – احمدحماد

کرکٹ کانواں ورلڈ کپ ٹورنامنٹ ۲۰۰۷ء کے موسم بہار میں ویسٹ انڈیز میں کھیلا گیا۔ یہ ورلڈ کپ ون ڈے انٹرنیشنل میچوں پہ مشتمل...

بُزدار کا لاہور – احمدحماد

لاہورہزاروں سال پرانا شہر ہے۔یہاں کے باسی اس سے بہت پیار کرتے ہیں۔جس طرح عربی زبان بولنے والے دیگر زبانیں بولنے والوں کو گونگا...

مزاحمت لیکس – احمدحماد

بارہ اکتوبر ۱۹۹۹؁ء کے فوجی انقلاب کی دو کہانیاں ہیں۔ اور دونوں ہی عوام نے سن رکھی ہیں۔ ایک کہانی وہ ہے جو ہم...

شہبازشریف کے خلاف لندن میں کوئی مقدمہ نہیں بنایا گیا، شہزاد اکبر

مشیر داخلہ واحتساب شہزاد اکبر نے کہا ہے کہ مسلم لیگ ن غلط بیانی کررہی ہے۔ شہبازشریف کے خلاف لندن میں کوئی مقدمہ بنایا گیا...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے