23.3 C
Islamabad
بدھ, دسمبر 2, 2020

ممبئی کی کراچی سوئٹس کا نام تبدیل؟

تازہ ترین

شہباز، حمزہ نے پیرول پر رہائی میں توسیع کی درخواست دی، پھر بھی نہیں لی، وزیر قانون پنجاب

وزیر قانون راجہ بشارت کا کہنا ہے کہ قائد حزب اختلاف شہباز شریف اور ان کے بیٹے حمزہ شہباز کی درخواست پر پیرول کی...

برطانیہ: کورونا ویکسین کی منظوری دے دی گئی، پاکستان میں جنوری تک دستیاب ہوگی

برطانیہ نے فائزر بائیوٹک کورونا ویکسین کی منظوری دے دی، برطانوی وزارت صحت کے مطابق کورونا ویکسین کی دستیابی 7 سے 9 دسمبر کے...

کرونا وائرس اور معاشی بحران، پاکستان میں ناکافی غذائیت کا مسئلہ مزید پیچیدہ ہو گیا

اگست 2018ء میں عمران خان نے برسرِ اقتدار آتے ہی جن مسائل سے نمٹنے کا عزم ظاہر کیا تھا، ان میں ناکافی غذائیت (malnutrition)...

ہم اسلام آباد کے راستے میں ہوں گے اور حکومت چلی جائے گی، رانا ثناء اللہ

پاکستان مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ نے دعویٰ کیا ہے کہ لاہور میں ہونے والے پی ڈی ایم جلسے میں...
- Advertisement -

بھارت کی انتہا پسند تنظیم شیوسینا کے ایک رہنما نے ممبئی کی دکان ‘کراچی سوئٹس’ کا نام تبدیل کرنے کی دھمکی دی ہے۔

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ایک وڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ شیوسینا کے مقامی رہنما نتن نندگاونکر بندا ویسٹ کے علاقے میں واقع دکان کے مالک کو دھمکا رہے ہیں کہ وہ اس دکان کا نام تبدیل کرے۔

سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی اس وڈیو پر کڑی تنقید کی گئی ہے جس کے بعد خود شیوسینا رہنما سنجے راوت کہتے ہیں کہ یہ ان کی تنظیم کا مؤقف نہیں ہے۔

یہ وڈیو خود نتن نندگاونکر نے اپنے فیس بک پیج سے شیئر کی تھی، جس میں دیکھا جا سکتا ہے کہ وہ دکان مالک سے کہہ رہے ہیں کہ آپ کے بڑے تقسیم کے وقت ہجرت کرکے پاکستان سے یہاں آئے، ہم آپ کا خیر مقدم کرتے ہیں لیکن مجھے کراچی نام سے نفرت ہے۔ پاکستان کا یہ شہر دہشت گردوں کا گڑھ ہے۔ اس لیے اس نام کو بدل دیں اور مراٹھی میں کوئی دوسرا نام رکھ لیں۔ انہوں نے یہ بھی تجویز کیا کہ دکان کو اپنے والدین کا نام بھی دے سکتے ہیں۔ آپ کو یہ نام بدلنا ہوگا، بلکہ بدلنا پڑے گا۔ اس کے لیے میں آپ کو کچھ وقت دیتا ہوں۔ جاتے جاتے نتن نے دھمکایا کہ 15 دن بعد پھر آؤں گا۔

یہ واضح نہیں ہے کہ یہ وڈیو کب شوٹ کی گئی ہے لیکن اس واقعے کے بعد مالک نے دکان کے نام پر کو ڈھانپ دیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ "میں کسی مسئلے میں نہیں پڑنا چاہتا۔ وکیل سے بات کی ہے اور آئندہ کچھ دنوں میں فیصلہ کریں گے کہ کراچی کا نام سائن بورڈز سے ہٹانا ہے یا نہیں۔”

ردعمل کے بعد شیوسینا رہنما سنجے راوت کہتے ہیں کہ کراچی بیکری اور کراچی سوئٹس پچھلے 60 سالوں سے ممبئی میں واقع ہے۔ ان کا پاکستان سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اس لیے ان سے نام تبدیل کرنے کا مطالبہ کرنے کی کوئی تُک نہیں بنتی۔

البتہ سوشل میڈیا پر عوام نے اس عمل کو کھلی غنڈہ گردی اور دادا گیری قرار دیا ہے اور پولیس سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ کارروائی کرے اور نتن سے بھی کہا ہے کہ وہ دکان مالک سے معافی مانگیں۔

مزید تحاریر

شہباز، حمزہ نے پیرول پر رہائی میں توسیع کی درخواست دی، پھر بھی نہیں لی، وزیر قانون پنجاب

وزیر قانون راجہ بشارت کا کہنا ہے کہ قائد حزب اختلاف شہباز شریف اور ان کے بیٹے حمزہ شہباز کی درخواست پر پیرول کی...

برطانیہ: کورونا ویکسین کی منظوری دے دی گئی، پاکستان میں جنوری تک دستیاب ہوگی

برطانیہ نے فائزر بائیوٹک کورونا ویکسین کی منظوری دے دی، برطانوی وزارت صحت کے مطابق کورونا ویکسین کی دستیابی 7 سے 9 دسمبر کے...

کرونا وائرس اور معاشی بحران، پاکستان میں ناکافی غذائیت کا مسئلہ مزید پیچیدہ ہو گیا

اگست 2018ء میں عمران خان نے برسرِ اقتدار آتے ہی جن مسائل سے نمٹنے کا عزم ظاہر کیا تھا، ان میں ناکافی غذائیت (malnutrition)...

ہم اسلام آباد کے راستے میں ہوں گے اور حکومت چلی جائے گی، رانا ثناء اللہ

پاکستان مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ نے دعویٰ کیا ہے کہ لاہور میں ہونے والے پی ڈی ایم جلسے میں...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے