23.3 C
Islamabad
بدھ, دسمبر 2, 2020

امریکا پاکستان، افغانستان اور ازبکستان کے لیے علاقائی فنڈز کا اجراء کرے گا

تازہ ترین

شہباز، حمزہ نے پیرول پر رہائی میں توسیع کی درخواست دی، پھر بھی نہیں لی، وزیر قانون پنجاب

وزیر قانون راجہ بشارت کا کہنا ہے کہ قائد حزب اختلاف شہباز شریف اور ان کے بیٹے حمزہ شہباز کی درخواست پر پیرول کی...

برطانیہ: کورونا ویکسین کی منظوری دے دی گئی، پاکستان میں جنوری تک دستیاب ہوگی

برطانیہ نے فائزر بائیوٹک کورونا ویکسین کی منظوری دے دی، برطانوی وزارت صحت کے مطابق کورونا ویکسین کی دستیابی 7 سے 9 دسمبر کے...

کرونا وائرس اور معاشی بحران، پاکستان میں ناکافی غذائیت کا مسئلہ مزید پیچیدہ ہو گیا

اگست 2018ء میں عمران خان نے برسرِ اقتدار آتے ہی جن مسائل سے نمٹنے کا عزم ظاہر کیا تھا، ان میں ناکافی غذائیت (malnutrition)...

ہم اسلام آباد کے راستے میں ہوں گے اور حکومت چلی جائے گی، رانا ثناء اللہ

پاکستان مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ نے دعویٰ کیا ہے کہ لاہور میں ہونے والے پی ڈی ایم جلسے میں...
- Advertisement -

امریکا کے خصوصی نمائندے زلمے خلیل زاد نے کہا ہے کہ امریکا جلد ہی افغانستان، پاکستان اور ازبکستان کے نمائندگان کے اعلیٰ سطحی اجلاس کا اعلان کرے گا تاکہ خطے میں تجارت اور ترقی کو بڑھایا جا سکے۔

امریکا، جو خود بھی اس اجلاس کا حصہ ہوگا، جنوبی و وسطی ایشیا میں سرمایہ کاری کو فروغ دینے کے لیے ایک فنڈ کا اجراء بھی کر رہا ہے۔

زلمے خلیل زاد ٹرمپ انتظامیہ کے خصوصی نمائندہ برائے افغان مفاہمت ہیں اور انہوں نے پاکستان کی مدد سے طالبان کے ساتھ امن معاہدے میں ایک کلیدی کردار ادا کیا ہے۔ مئی 2021ء تک افغانستان سے غیر ملکی افواج کے مکمل انخلاء کا مطالبہ کرنے والے معاہدے پر فروری میں دستخط کیے گئے تھے۔ ٹرمپ انتظامیہ اس عرصےکے دوران افغانستان سے اپنے تمام دستے نکالنا چاہتی ہے لیکن اسے پنٹاگون کی جانب سے سخت مزاحمت کا سامنا ہے کہ جو غیر مشروط انخلاء کا حامی نہیں۔

خلیل زاد نے اپنے ایک ٹوئٹ میں کہا ہے کہ ہماری نظریں جلد ہی ایک سرمایہ کاری فنڈ کے اعلان اور امریکا، پاکستان، ازبکستان اور افغانستان کے نمائندوں کے ایک اعلیٰ سطحی اجلاس پر مرکوز ہیں، تاکہ رابطے، تجارت اور ترقی کے منصوبوں پر بات ہو۔

یہ ٹوئٹ ازبکستان کے وزیر خارجہ عبد العزیز کاملوف کے ساتھ ہونے والی ملاقات کے بعد کیا گیا ہے۔ ازبک نمائندہ خصوصی عصمت اللہ ارگاشیف بھی ملاقات میں شریک تھے۔

خلیل زاد نے کہا کہ ہم نے افغان امن مذاکرات کی موجودہ صورت حال پر اظہارِ خیال کیا اور افغانستان میں امن کے نتیجے میں علاقائی اقتصادی رابطوں، تجارت کی بحالی اور ترقی کی اہمیت سے وابستگی کا اعادہ کیا۔ امریکی نمائندے نے کہا کہ افغانستان میں امن وسطی ایشیا، افغانستان اور پاکستان سب کو فائدہ پہنچائے گا۔

رواں ہفتے وزیر اعظم عمران خان نے بھی افغانستان کا دورہ کیا کہ جہاں انہوں نے تشدد کے خاتمے اور طالبان اور افغان افواج کے درمیان فائر بندی کے لیے ہر ممکن مدد کا عز م ظاہر کیا۔

بحیثیت وزیر اعظم پاکستان کا پہلا دورۂ کابل افغانستان ایسے وقت پر ہوا جب ملک میں پرتشدد کارروائیاں بڑھتی جا رہی ہیں، جن کی وجہ سے افغان حکومت اور طالبان کے درمیان امن مذاکرات کو بھی خطرہ لاحق ہو گیا ہے۔

ٹرمپ انتظامیہ اگلے سال کے اوائل میں نئی انتظامیہ کے عہدہ سنبھالنے سے پہلے پہلے اس معاہدے کو نافذ کرنا چاہتی ہے۔ نو منتخب بائیڈن انتظامیہ بھی افواج کا انخلاء چاہتی ہے لیکن وہ ٹرمپ کی طرح یہ کام جلد از جلد نہیں کرنا چاہتی۔

مزید تحاریر

شہباز، حمزہ نے پیرول پر رہائی میں توسیع کی درخواست دی، پھر بھی نہیں لی، وزیر قانون پنجاب

وزیر قانون راجہ بشارت کا کہنا ہے کہ قائد حزب اختلاف شہباز شریف اور ان کے بیٹے حمزہ شہباز کی درخواست پر پیرول کی...

برطانیہ: کورونا ویکسین کی منظوری دے دی گئی، پاکستان میں جنوری تک دستیاب ہوگی

برطانیہ نے فائزر بائیوٹک کورونا ویکسین کی منظوری دے دی، برطانوی وزارت صحت کے مطابق کورونا ویکسین کی دستیابی 7 سے 9 دسمبر کے...

کرونا وائرس اور معاشی بحران، پاکستان میں ناکافی غذائیت کا مسئلہ مزید پیچیدہ ہو گیا

اگست 2018ء میں عمران خان نے برسرِ اقتدار آتے ہی جن مسائل سے نمٹنے کا عزم ظاہر کیا تھا، ان میں ناکافی غذائیت (malnutrition)...

ہم اسلام آباد کے راستے میں ہوں گے اور حکومت چلی جائے گی، رانا ثناء اللہ

پاکستان مسلم لیگ ن پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ نے دعویٰ کیا ہے کہ لاہور میں ہونے والے پی ڈی ایم جلسے میں...

جواب دیں

اپنا تبصرہ لکھیں
یہاں اپنا نام لکھئے